راحیل شریف نے 3 شرائط پر اسلامی ممالک کے اتحاد کی سربراہی قبول کی

اسلام آباد… سابق آرمی چیف نے 39 ممالک کے اتحاد کا سربراہ بننے کے لیے سعودی عرب کے سامنے تین شرائط رکھیں۔امجد شعیب- نجی ٹی وی سے بات کرتے ہوئے سابق فوجی افسر و دفاعی تجزیہ کار امجد شعیب نے دعویٰ کیا کہ سابق آرمی چیف آف پاکستان نے پہلی شرط یہ رکھی کہ وہ کسی کی کمان میں کام نہیں کریں گے،دوسری شرط تھی کہ وہ اس اتحاد میں ایران کو بھی شامل کریں گے، تیسری شرط کے مطابق راحیل شریف نے کہا تھا کہ وہ اسلامی ممالک کے درمیان مصالحت کا کردار ادا کریں گے، ان شرائط کے بعد ہی انہیں سربرہ مقرر کیا گیا ہے جس کا باضابط اعلان جلد کیا جائے۔ انہوں ںے بتایا کہ ایران کو اسلامی فوجی اتحاد میں شامل کرنے کی شرط پیش کرتے ہوئے راحیل شریف نے کہا تھا کہ ایران اگر فوری طور پر اپنی فوج اتحاد میں شامل کرنے پر رضا مند نہ ہو تو کم ازکم اسے آبزورو کی حیثیت سے شامل کرلیا جائے۔ امجد شعیب نے کہا کہ پہلے بھی راحیل شریف کی کوششوں سے ہی ایران و سعودی عرب نے آپس میں بات چیت کرنے پر آمادگی ظاہر کی تھی، وہ سعودی اور ایرانی اختلافات ختم کرانے کے لیے وزیراعظم کو خاص طور پر یہاں سے لے کر گئے تھے۔ واضح رہے کہ وزیر دفاع خواجہ آصف راحیل شریف کو 39 ممالک کے فوجی اتحاد کا سربراہ بنائے جانے کی تصدیق کرچکے ہیں۔تازہ ترین بیان سے اسلامی ممالک کے اتحاد کے مخالفین کا منہ بند ہو جائے گا اور وہ بھی راحیل شریف کی ان شرائط کی وجہ سے مطمئن ہو جائینگے

اپنا تبصرہ بھیجیں