مشہور و معروف سعودی عالم دین شیخ عائض القرنی فلپائن میں قاتلہ حملے میں زخمی

فلپائن :(بنوریہ میڈیا/ویب ڈیسک) مشہور و معروف سعودی عالم دین شیخ عائض القرنی فلپائن میں قاتلانہ حملے میں زخمی، تفصیلات کے مطابق منگل کی رات مقامی وقت کے مطابق 02:8 پر شیخ عائض القرنی فلپائن کی اسٹیٹ ویسٹرن منڈانو کی یونیورسٹی آف زمبونگا میں ایک بڑے سمپوزیم سے خطاب کرکے نکل رہے تھے کہ یونیورسٹی کے گیٹ نامعلوم دہشت گرد نے حملہ کردیا، جس کے نتیجے میںپانچ افراد ہلاک اور دو افراد زخمی ہوگئے، العربیہ نیوز کے مطابق شیخ عائض القرنی کو تین گولیاں لگیں ایک سیدھے کندھے پر دوسری بائیں بازو اور تیسری سینے پر۔ اطلاعات کے مطابق شیخ عائض کی حالت خطرے سے باہر ہے اور انہیں فوری طور پر جہاز کے ذریعے منیلا منتقل کردیا گیا۔ سرکاری ذرائع کے مطابق ہلاک ہونے والوں میں عائض القرنی کے 4 محافظ سمیت ایک حملہ آور بھی شامل ہے۔ سعودی عرب سے تعلق رکھنے والے 75 سالہ شیخ عائض القرنی دنیا بھر میںمعروف عالم دین اور مصنف کے طور پر جانے جاتے ہیں ، 12 ملین کے قریب تعداد ٹویٹر پر ان کے فالورز کی موجود ہے، ان کی مشہور زمانہ کتاب لاتحزن (پریشان مت ہو) دنیا بھر میں لاکھوں کی تعداد ہاتھوں ہاتھ فروخت ہوئی۔مشہور مصنف اور جارج واشنگٹن کا پروگرام برائے انتہا پسندی و دہشت گردی کے خصوصی معاون جے ایم برگر نے اپنے ایک ٹویٹ میں کہا کہ ان پر حملہ کے پیچھے داعش کا ہاتھ ہوسکتا ہے، کیونکہ شیخ عائض داعش کی ہٹ لسٹ پر بھی تھے،

:حملے سے چند لمحے قبل شیخ عائض کا ٹویٹ

اپنا تبصرہ بھیجیں